March, 2016

یقین مہربلب ہے گمان بولتا ہے

  یقین   مہربلب    ہے   گمان    بولتا   ہے عجیب  بات  ہے جو  بے زبان  بولتا  ہے میں  چاہتا ہوں  وہ کہتا رہے ،  میں  سنتارہوں یہ کون   اسکے  مر ے   درمیان   بولتا   ہے یہ   زخم  جسکی  عطا تھی،  اسے  بھلا بھی دیا یہ   زخم  بھر  تو   گیا  ہے،   نشان  بولتا  ہے یہاں جو گذری قیامت  وہ […]

مکمل تحریر پڑھنے کے لیئے کلک کریں