یقین مہربلب ہے گمان بولتا ہے

 

یقین   مہربلب    ہے   گمان    بولتا   ہے

عجیب  بات  ہے جو  بے زبان  بولتا  ہے

میں  چاہتا ہوں  وہ کہتا رہے ،  میں  سنتارہوں

یہ کون   اسکے  مر ے   درمیان   بولتا   ہے

یہ   زخم  جسکی  عطا تھی،  اسے  بھلا بھی دیا

یہ   زخم  بھر  تو   گیا  ہے،   نشان  بولتا  ہے

یہاں جو گذری قیامت  وہ دفعتًا تھی  کیا

مکین   سکتے  میں   ہیں  اور  مکان  بولتا   ہے

کوئی توآئےمیں جلتاہوں بےسبب کب سے

کڑی  ہے  دھوپ   ذرا  سا ئبان   بولتا  ہے

ہوائیں  چلتی   رہیں   نا خدا  کی  مرضی  سے

میں تھک  گیا  ہوں  بہت  بادبان  بولتا  ہے

اپنا تبصرہ یہاں تحریر کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*