اپنے شانے سے لگا لے کوئی

اپنے شانے سے لگا لے کوئی
گر رہا ہوں میں، سنبھالے کوئی

کیسی ویرانی ہے، حیرانی ہے
گرد جمتی ہے، نہ جالے کوئی

اک بھنور اور بھی سر کر نا ہے
اس بھنور سے تو نکالے کوئی

حسن اک شعلئہ جوالہ ہے
آگ میں ہاتھ نہ ڈالے کوئی

اپنا تبصرہ یہاں تحریر کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*